Sunday, December 4, 2022
HomeNational newsپی پی پی اسے لیٹ کر نہیں لے گی، غنی نے خبردار...

پی پی پی اسے لیٹ کر نہیں لے گی، غنی نے خبردار کیا

سندھ کے وزیر اطلاعات و محنت سعید غنی نے خبردار کیا ہے کہ اگر پنجاب پولیس نے وفاقی دارالحکومت میں سندھ ہاؤس پر حملہ کرنے کی جرات کی تو وزیر اعظم عمران خان، ان کی کابینہ کے ارکان اور اسلام آباد پولیس کے خلاف ایف آئی آر درج کی جائے گی۔

وفاقی وزراء جو سندھ ہاؤس پر حملے کی دھمکیاں دیتے رہے ہیں، انہیں یاد رکھنا چاہیے کہ پی ٹی آئی سے تعلق رکھنے والے قانون ساز کراچی میں موجود تھے۔ وہ ابھی اسلام آباد نہیں پہنچے تھے، اور ہم کسی بھی قسم کے حلف کے تحت نہیں ہیں کہ اگر آپ کسی بھی قانون ساز کے خلاف طاقت استعمال کرنے کی کوشش کرتے ہیں تو ہم ہمیشہ نرم رہیں گے،” انہوں نے جمعرات کو ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا۔

پی ٹی آئی حکومت کو ٹِٹ کے بدلے جواب کی تنبیہ کرتے ہوئے غنی نے کہا کہ ’’آپ ہمارے ارکان (قومی اسمبلی) کے ساتھ جیسا سلوک کریں گے، ہم آپ کے ارکان کے ساتھ بھی ویسا ہی سلوک کریں گے۔

“اگر ہمارے قانون سازوں کو زبردستی روکا گیا تو ہم آپ کے قانون سازوں کو زبردستی روکیں گے۔ وفاقی دارالحکومت میں آپ کے اسی طرح کے عوامی اجتماع کے بعد ہم اسلام آباد میں لاکھوں لوگوں کا اجتماع منعقد کریں گے، کیونکہ حکومت کی جانب سے غنڈہ گردی اور بدنظمی کے کسی بھی شو کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

وزیراطلاعات سندھ نے کہا کہ موجودہ وفاقی حکومت کے دن گنے جا چکے ہیں لہٰذا ریاستی اہلکار اور ایجنسیاں اس کے غیر قانونی احکامات کی پاسداری نہ کریں۔ انہوں نے کہا کہ سرکاری افسران کا فرض ہے کہ وہ اپنے حلف کے مطابق حکومتی اعلیٰ افسران کے غیر قانونی احکامات پر عمل نہ کریں کیونکہ اگر وہ اپنے اعلیٰ افسران کی غیر مجاز ہدایات پر عمل درآمد کرتے ہیں تو انہیں تادیبی کارروائی کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ پارلیمنٹ لاجز پر پولیس ایکشن کے بعد ایم این ایز اسلام آباد میں سندھ ہاؤس میں مقیم تھے جس کے نتیجے میں اپوزیشن کے دو قانون سازوں کو حراست میں لیا گیا اور ایک سینیٹر کے ساتھ بدتمیزی کی گئی۔ علاوہ ازیں پنجاب میں اینٹی کرپشن اسٹیبلشمنٹ کو حکمرانوں کی جانب سے وزیراعظم عمران خان کی حمایت نہ کرنے والے اراکین اسمبلی کے خلاف مقدمات درج کرنے کی ہدایت کی گئی تھی۔

انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی، پی ایم ایل این اور دیگر اپوزیشن جماعتوں سے تعلق رکھنے والے قانون سازوں نے اپنی حفاظت اور حفاظت کے لیے سندھ ہاؤس میں رہنے کا انتخاب کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کے وہ قانون ساز جنہوں نے عمران خان کی حمایت نہیں کی وہ بھی سندھ ہاؤس میں مقیم ہیں۔

سعید غنی نے کہا کہ آج تک عمران خان کے ساتھ کھڑے ارکان اسمبلی جب تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ ہو گی تو وزیراعظم کے خلاف بھی ووٹ دیں گے۔

انہوں نے کہا کہ حکمران جماعت سے تعلق رکھنے والے کئی ایم این ایز نے پی ٹی آئی کی جانب سے ایسے منحرف قانون سازوں کے خلاف جھوٹے الزامات لگانے اور انہیں تشدد اور حملے کی دھمکیاں دینے کے بعد وزیر اعظم کے خلاف کھلے عام مخالفت کے ساتھ سامنے نہ آنے کا انتخاب کیا ہے۔

غنی نے کہا کہ گورنر سندھ عمران اسماعیل نے پی ٹی آئی کے اراکین اسمبلی کے ہمراہ گزشتہ روز عامر لیاقت سے ان کے گھر پر ملاقات کی اور بعد میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے گورنر نے ایم این اے کی تعریف کی۔

پی ٹی آئی کے ایم این اے عامر نے بھی بعد میں صحافیوں کو بتایا کہ وہ غیر جانبدار ہیں اور تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ کے دن وہ اپنا فیصلہ کریں گے۔ سندھ کے وزیر نے کہا کہ وزیراعظم کا اقتدار سے نکلنا یقینی ہوگیا ہے کیونکہ تحریک انصاف سے تعلق رکھنے والے قانون سازوں کی ایک بڑی تعداد اس دن وزیراعظم کے خلاف ووٹ دے گی جس دن تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ عمران خان کی پوری کابینہ وزیراعظم کے خلاف ووٹ دے گی اگر اپوزیشن کی جانب سے وفاقی وزراء کو وزیراعظم کی برطرفی کے بعد کابینہ کے ارکان کے طور پر برقرار رکھنے کی یقین دہانی کرائی جائے گی۔

انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کے قانون ساز وزیر اعظم سے اچانک دشمنی نہیں کر گئے، کیونکہ انہوں نے ماضی میں کچھ عرصہ پہلے سے عمران خان کی مخالفت شروع کر دی تھی کیونکہ قومی اسمبلی میں ان کی تقاریر اس حقیقت کا منہ بولتا ثبوت تھیں۔

سعید غنی نے عمران خان کو مشورہ دیا کہ وہ اس حقیقت کو مان لیں کہ ان کے اقتدار کے دن گنے جا چکے ہیں۔ ساتھ ہی سعید غنی نے سندھ میں گورنر راج کی تجویز کو پاگل پن قرار دیا۔ انہوں نے خبردار کیا کہ اگر وفاقی حکومت نے ایسا کیا تو پیپلز پارٹی انہیں سبق سکھائے گی۔ انہوں نے کہا کہ یہ کوئی آسان کام نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ سندھ میں گورنر راج لگانے کی تجویز صرف اس لیے دینا کہ پی ٹی آئی کے کچھ اراکین سندھ ہاؤس میں ٹھہرے ہوئے ہیں، یہ پاگل پن کے سوا کچھ نہیں۔

وفاقی وزیر نے کہا کہ سندھ میں گورنر راج لگانے کی کوئی آئینی بنیاد نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ میں عمران خان سے کہنا چاہتا ہوں کہ وہ شیخ رشید احمد جیسے مشیروں کی وجہ سے ایسی حالت میں پہنچے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ اگر گورنر راج صرف بیڈ گورننس کی بنیاد پر لگایا گیا ہے تو پنجاب اور خیبرپختونخوا میں بھی نافذ کیا جائے اور وفاقی حکومت کو بھی برطرف کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ سندھ حکومت تمام صوبائی حکومتوں سے بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کر رہی ہے۔

RELATED ARTICLES

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -

Most Popular