Thursday, December 1, 2022
HomeNational newsایک ملاقات، چار کہانیاں: عمران خان چوہدری برادران سے ملے لیکن بغیر...

ایک ملاقات، چار کہانیاں: عمران خان چوہدری برادران سے ملے لیکن بغیر کسی یقین دہانی کے چلے گئے

وزیر اعظم عمران خان نے منگل کی شام اپنے اہم اتحادی شراکت داروں چوہدری برادران سے آدھے گھنٹے سے زیادہ ملاقات کی لیکن بغیر کسی ٹھوس یقین دہانی کے واپس چلے گئے۔

تین ذرائع، جو پی ٹی آئی کی طرف سے میٹنگ کا حصہ تھے، اور ایک ذریعہ مسلم لیگ (ق) سے تھا، جب دی نیوز سے رابطہ کیا گیا اور سوال کیا گیا تو ان کے پاس مختلف کہانیاں تھیں۔ تینوں حکومتی ذرائع کی جانب سے ملاقات کے بیانات ایک دوسرے سے مختلف تھے جبکہ مسلم لیگ (ق) کے ذرائع نے اصرار کیا کہ ملاقات میں جو بات چیت ہوئی اس کے بارے میں ایک حکومتی وزیر کی جانب سے میڈیا کو غلط معلومات فراہم کی گئیں۔

مسلم لیگ (ق) کے ذرائع نے کہا کہ اسی وجہ سے پارٹی نے ایک پریس بیان جاری کیا ہے جس میں ملاقات میں تبادلہ خیال کیا گیا تھا۔ (ق) لیگ کے ذرائع نے کہا کہ عدم اعتماد کی تحریک کے معاملے پر اس طرح بات نہیں کی گئی اور دونوں فریقوں کے درمیان عمومی بات چیت ہوئی۔ ذرائع نے بتایا کہ وزیر اعظم نے اپنے دورہ روس کے بارے میں بات کی۔ مسلم لیگ ق کی قیادت سے شہباز شریف کے ساتھ ان کی حالیہ بات چیت کے بارے میں پوچھا گیا۔ ذرائع نے بتایا کہ وزیراعظم کو بتایا گیا کہ چھوٹے شریف 14 سال بعد چوہدریوں سے ملنے آئے ہیں۔ چوہدریوں کا کہنا تھا کہ سیاسی خاندان ہونے کی وجہ سے ان کا سیاستدانوں سے میل جول غیر معمولی بات نہیں ہے۔ دریں اثنا، تین حکومتی ذرائع میں سے ایک نے کہا کہ میٹنگ میں “سیاست” پر اس طرح بات نہیں کی گئی۔ وہاں اتنے لوگ تھے کہ عدم اعتماد کا معاملہ اس طرح زیر بحث نہیں آیا۔ وزیراعظم نے چوہدری شجاعت کی خیریت دریافت کی جبکہ دوسری جانب سے عمران خان کے دورہ روس کو سراہا۔ ذرائع نے کہا کہ یہ ایک اچھی ملاقات تھی اور انہوں نے امید ظاہر کی کہ مسلم لیگ (ق) حکومت کے ساتھ رہے گی۔

دوسرے حکومتی ذریعے نے کہا کہ اگرچہ وزیراعظم کی جانب سے عدم اعتماد کے اقدام کے حوالے سے کوئی یقین دہانی نہیں مانگی گئی اور نہ ہی چوہدریوں کی جانب سے دی گئی تاہم مسلم لیگ (ق) کی اعلیٰ قیادت کی باڈی لینگویج حکومت کے لیے اچھی اور حوصلہ افزا تھی۔ اس دوسرے حکومتی ذریعے نے بتایا کہ حکومتی جانب سے پوچھ گچھ کے بعد چوہدریوں نے شہباز شریف کے دورے کے بارے میں بھی بات کی۔ چوہدریوں کا کہنا تھا کہ انہوں نے شہباز شریف سے اپوزیشن کے ایکشن پلان کے بارے میں پوچھا جو ق لیگ کی قیادت کو ٹھوس نہیں ملا۔ جب ان سے پوچھا گیا تو ذرائع نے بتایا کہ انہیں امید ہے کہ دونوں فریقوں کے درمیان سہولت کی شادی جاری رہے گی۔ پی ٹی آئی کے تیسرے ذریعے نے رابطہ کرنے پر اس نمائندے کو بتایا کہ چوہدری شجاعت نے عمران خان سے کہا کہ وہ ڈٹے رہیں۔ ذرائع نے چوہدریوں کے حوالے سے شہباز شریف کو بتایا کہ عدم اعتماد کا اقدام ناکام ہونے کی صورت میں عمران خان کہیں زیادہ طاقتور بن کر ابھریں گے۔ اس ذریعے نے دعویٰ کیا کہ چوہدریوں نے شہباز شریف پر زور دیا تھا کہ وہ ایسی مہم جوئی نہ کریں۔ تیسرے حکومتی ذریعے نے مزید بتایا کہ چوہدریوں نے یہ بھی کہا کہ انہیں وزارت اعلیٰ کی پیشکش کی گئی لیکن صرف پنجاب اسمبلی تحلیل کرنے کا اعلان کیا گیا۔ حکومتی ذرائع نے چوہدری پرویز الٰہی کے حوالے سے بتایا کہ “ہم اس سے کیا حاصل کریں گے۔”

ذرائع نے بتایا کہ وزیراعظم نے چوہدریوں کو اپنے حالیہ روس اور چین کے دوروں کے بارے میں آگاہ کیا۔ وزیر اعظم نے کہا کہ انہیں کچھ لوگوں نے مشورہ دیا تھا کہ وہ روس نہ جائیں لیکن ان کا کہنا تھا کہ ان کا خیال ہے کہ پاکستان ماسکو کو نہیں چھین سکتا۔ ذرائع نے بتایا کہ وزیر اعظم نے چوہدریوں کو ریلیف پیکج اور ٹیکس ایمنسٹی کی پیشکش کے بارے میں بھی بتایا۔ تاہم مسلم لیگ (ق) کے ذرائع نے اصرار کیا کہ ایک خاص حکومتی وزیر میٹنگ کے بارے میں میڈیا کو جو کچھ بتا رہا ہے وہ حقیقت پر مبنی نہیں ہے۔

RELATED ARTICLES

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -

Most Popular