Sunday, December 4, 2022
HomeNational newsمیزائل مسئلہ: پاکستان نے بھارت سے سوال کیا کہ اسے فوری طور...

میزائل مسئلہ: پاکستان نے بھارت سے سوال کیا کہ اسے فوری طور پر آگاہ کیوں نہیں کیا گیا؟

انڈین پریس انفارمیشن بیورو کے ڈیفنس ونگ کی جانب سے دی گئی اس وضاحت سے مکمل طور پر عدم اطمینان — جس کے لیے اس نے کہا کہ 9 مارچ کو پاکستانی علاقے میں میزائل کا ‘حادثاتی فائرنگ’ تھا — دفتر خارجہ (ایف او) نے اس کے بجائے ‘مشترکہ تحقیقات’ کا مطالبہ کیا۔ واقعہ کے ارد گرد کے حقائق کو درست طریقے سے قائم کریں.

ایک سینئر اہلکار نے دی نیوز کو بتایا، “یہ ایک عوامی بیان ہے جو ہم نے آج جاری کیا ہے، لیکن یہ یہاں ختم نہیں ہوتا ہے۔ ہم مختلف سطحوں اور مختلف فورمز پر بھارت کے ساتھ اس انتہائی سنگین مسئلے کو اٹھائیں گے۔

پاکستان کو اس بات پر بھی تشویش ہے کہ نااہلی کی گہری سطح کو دیکھتے ہوئے، بھارت کو یہ بتانے کی ضرورت ہے کہ آیا واقعی اس میزائل کو اس کی مسلح افواج نے ہینڈل کیا تھا یا کچھ ’’بدمعاش عناصر‘‘۔

پاکستان نے عالمی برادری سے بھی مطالبہ کیا ہے کہ وہ جوہری ماحول میں سنگین نوعیت کے اس واقعے کا سنجیدگی سے نوٹس لے اور خطے میں تزویراتی استحکام کو فروغ دینے میں اپنا بھرپور کردار ادا کرے۔

ایف او کا کہنا ہے کہ اس نے بھارتی بیان کا نوٹس لیا ہے کہ فائرنگ “تکنیکی خرابی” کی وجہ سے ہوئی تھی، اور اس نے اندرونی عدالتی تحقیقات کا فیصلہ کیا تھا لیکن اس طرح کے “جوہری ماحول” کے لیے یہ کافی نہیں تھا۔

“واقعہ کی سنگین نوعیت سیکورٹی پروٹوکول اور جوہری ماحول میں میزائلوں کے حادثاتی یا غیر مجاز لانچ کے خلاف تکنیکی تحفظات کے حوالے سے کئی بنیادی سوالات کو جنم دیتی ہے۔ اس طرح کے سنگین معاملے کو ہندوستانی حکام کی طرف سے پیش کردہ سادہ وضاحت کے ساتھ حل نہیں کیا جا سکتا”، دفتر خارجہ نے کہا۔

پاکستان اب اس عوامی بیان میں پوچھے گئے کچھ سوالات کے جوابات کا منتظر ہے۔ ہو سکتا ہے جب مزید رابطے ہوں گے تو مزید سوالات بھی پوچھے جائیں گے۔

فی الحال پاکستان سات سوالوں کے جواب مانگ رہا ہے۔

دفتر خارجہ نے کہا کہ “بھارت کو حادثاتی میزائل لانچنگ اور اس واقعے کے مخصوص حالات کو روکنے کے لیے کیے گئے اقدامات اور طریقہ کار کی وضاحت کرنی چاہیے، اور پاکستانی حدود میں گرنے والے میزائل کی نوعیت اور خصوصیات کی بھی واضح وضاحت کرنی چاہیے”۔

بھارت سے یہ بھی کہا گیا ہے کہ وہ حادثاتی طور پر لانچ کیے گئے میزائل کی پرواز کے راستے/ٹریجیکٹری کی وضاحت کرے اور یہ کہ آخر کار یہ کیسے مڑ کر پاکستان میں داخل ہوا۔

بھارت کے لیے یہ بھی اہم ہے کہ وہ پاکستان کو بتائے کہ کیا میزائل خود تباہی کے طریقہ کار سے لیس تھا اور یہ کیوں ناکام ہو گیا۔

پاکستان یہ جاننے کا مطالبہ کر رہا ہے کہ کیا ہندوستانی میزائلوں کو معمول کی دیکھ بھال کے تحت بھی لانچ کے لیے رکھا جاتا ہے۔

پاکستان کے لیے سب سے اہم ایک سوال جس کا بھارت ابھی تک جواب دینے سے قاصر ہے، ’’بھارت پاکستان کو میزائل کے حادثاتی لانچنگ کے بارے میں فوری طور پر مطلع کرنے میں کیوں ناکام رہا اور پاکستان کی جانب سے واقعے کا اعلان کرنے اور وضاحت طلب کیے جانے تک تسلیم کرنے کا انتظار کیوں کیا؟‘‘

بھارت کو واضح طور پر بتایا گیا ہے کہ یہ سارا واقعہ سٹریٹجک ہتھیاروں کے بھارتی ہینڈلنگ میں سنگین نوعیت کی کئی خامیوں اور تکنیکی خامیوں کی نشاندہی کرتا ہے۔

ایف او نے کہا کہ ‘اندرونی کورٹ آف انکوائری کا ہندوستانی فیصلہ کافی نہیں ہے کیونکہ میزائل پاکستانی حدود میں جا کر گرا’۔

دفتر خارجہ نے خبردار کیا کہ “کم فاصلے اور ردعمل کے اوقات کے پیش نظر، دوسری طرف سے کوئی بھی غلط بیانی اپنے دفاع میں سنگین نتائج کے ساتھ جوابی اقدامات کا باعث بن سکتی ہے۔”

ملتان سے ندیم شاہ مزید کہتے ہیں: وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے ہفتے کے روز کہا کہ بھارت کی جانب سے پاکستان پر میزائل داغنا انتہائی غیر ذمہ دارانہ اقدام ہے۔

اگر پاک فضائیہ (پی اے ایف) ساری صورتحال پر نظر نہ رکھتی تو پاکستان کی جانب سے ردعمل بھارتی غیر ذمہ داری کی وجہ سے امن کو درہم برہم کر سکتا تھا۔

انہوں نے کہا کہ دفتر خارجہ نے قائم مقام بھارتی ہائی کمشنر کو طلب کیا اور غیر ذمہ دارانہ رویہ پر تنبیہ کی۔

انہوں نے کہا کہ وہ بھارت کے مناسب جواب کا انتظار کر رہے ہیں۔

دفتر خارجہ نے امریکہ، چین اور فرانس سمیت سلامتی کونسل کے مستقل ارکان کو مدعو کیا اور اپنے تحفظات کا اظہار کیا۔ بھارت کا کہنا ہے کہ یہ ایک حادثہ تھا اور اگر ہوا تو نقصان کا ذمہ دار کون ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس کارروائی نے بھارتی نظام کی کمزوری کو بے نقاب کر دیا ہے۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ انٹرنیشنل ایوی ایشن اتھارٹی قانون کی خلاف ورزیوں کا نوٹس لے۔ اقوام متحدہ سمیت بین الاقوامی اداروں کو انسانی بنیادوں پر ایکشن لینا چاہیے اور ذمہ داروں کو انصاف کے کٹہرے میں لانا چاہیے۔ بھارتی میڈیا کہہ رہا ہے کہ اگر پاکستان نے ایسا کیا ہوتا تو میڈیا کو آگ لگ جاتی۔ انہوں نے کہا کہ اسے نہ صرف قومی سطح پر بلکہ عالمی سطح پر بھی اجاگر کیا جانا چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان روس اور یوکرین کا مسئلہ مذاکرات کے ذریعے حل کرنا چاہتا ہے۔ پاکستان نے بیس سالہ جنگ کا خمیازہ بھگتنا پڑا اور ہزاروں قیمتی انسانی جانوں کی قربانی دینے کے علاوہ اس کی بھاری قیمت ادا کی۔

بین الاقوامی اداروں کو انسانی بنیادوں پر کام کرنا چاہیے۔ پاکستان جلد ہی یوکرین کے عوام کے لیے انسانی بنیادوں پر امداد بھیجے گا۔

RELATED ARTICLES

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -

Most Popular