Saturday, November 26, 2022
HomeNational newsوزیراعظم عمران خان تیسری قوت کو اکسانے کی کوشش کر رہے ہیں،...

وزیراعظم عمران خان تیسری قوت کو اکسانے کی کوشش کر رہے ہیں، بلاول

پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے جمعہ کو کہا کہ وزیراعظم عمران خان طاقت کے استعمال سے بحران پیدا کر کے ’تیسری قوت‘ ثابت کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

جیو نیوز کے پروگرام آج شاہ زیب خانزادہ کے ساتھ میں گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ عمران خان کو سیاسی شہید نہیں بننے دیں گے۔ انہوں نے لوگوں کو مبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ عمران اکثریت کی حمایت کھو چکے ہیں اور ان کی حکومت گر گئی ہے۔ بلاول نے کہا کہ وزیراعظم نے پہلے پارلیمنٹ لاجز اور پھر سندھ ہاؤس پر حملہ کرکے اپوزیشن کو دہشت زدہ کرنے کی کوشش کی، لیکن ہم ہچکچاہٹ نہیں مانیں گے۔

انہوں نے کہا کہ وزیراعظم کا طاقت کا استعمال آئین کے آرٹیکل 6 کی خلاف ورزی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پی پی پی وزارت عظمیٰ کے لیے اپنا امیدوار کھڑا نہیں کرے گی کیونکہ یہ پی ایم ایل این کا حق ہے، انتخابی اصلاحات پی پی پی کی ترجیح ہے۔ نئی حکومت کا مینڈیٹ ان اصلاحات تک محدود رہے گا جس کے لیے چند ماہ درکار ہوں گے۔ انہوں نے مزید کہا کہ تمام فیصلے اتفاق رائے سے کیے جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ اپوزیشن شہباز شریف کی 5 سال کے لیے قومی حکومت کی تجویز پر غور کرے گی تاہم اب تک ہم نے انتخابی اصلاحات اور منصفانہ انتخابات پر بات کی ہے۔

انہوں نے ہارس ٹریڈنگ کے الزام کو مسترد کرتے ہوئے سوال کیا کہ کیا پی پی پی پی ایم ایل این سے وزیراعظم کے لیے پیسے خرچ کرے گی؟ انہوں نے کہا کہ جدوجہد حکومت کو گرانے کی نہیں ہے بلکہ یہ ایک غیر جمہوری شخص کو ہٹانے کا جمہوری طریقہ ہے۔ بلاول بھٹو نے کہا کہ عوام اور اپوزیشن منصفانہ انتخابات کے ذریعے نمائندہ حکومت چاہتے ہیں۔

انہوں نے کہا: ’’ہماری جدوجہد سلیکشن سسٹم کو ختم کرنے کے لیے ہے۔ ہم نے ایک غیر جمہوری شخص کو جمہوری طریقے سے ہٹانے کے لیے اپوزیشن کو اکٹھا کیا۔ ہم نہیں چاہتے کہ 2018 میں جو ہوا اسے دہرایا جائے۔

انہوں نے پروگرام کے اینکر سے پوچھا: “مجھے ایک وجہ بتائیں کہ عمران کو ایک دن بھی وزیر اعظم رہنے دیا جائے۔” انہوں نے کہا کہ ایم کیو ایم کے ساتھ مذاکرات “بہت مثبت” رہے ہیں، اور پیپلز پارٹی نے ان کے مطالبات مان لیے ہیں۔ ہم کراچی اور صوبے کی ترقی کے لیے مل کر کام کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ وزیراعظم اپوزیشن، اپنے اتحادیوں یا اختلاف رائے رکھنے والے پارٹی ارکان سے بات کرنے کو تیار نہیں ہیں، جب کہ اپوزیشن مذاکرات کے لیے تیار ہے۔ بلاول بھٹو نے کہا کہ پاکستان کی تاریخ میں یہ پہلا واقعہ ہو گا کہ کسی وزیر اعظم کو عدم اعتماد کے ذریعے عہدے سے ہٹایا جا رہا ہے۔ میں کالا کوٹ پہن کر عدالت نہیں گیا اور نہ ہی گیٹ نمبر 4 پر دستک دی، سلیکشن سسٹم کو ختم کرنا جمہوریت کا انتقام ہو گا۔

بلاول نے کہا کہ اگر اس شخص (عمران خان) کو وزیراعظم کے دفتر میں رہنے دیا گیا تو وہ میڈیا کی آزادی پر حملہ کرے گا۔ بلاول نے حکومت سے کہا کہ وہ اپنے سروں کی گنتی محفوظ کر لے یا استعفیٰ دے، انہوں نے مزید کہا کہ “چند اچھے آدمیوں” نے ملک کو ایک نااہل شخص سے نجات دلانے کے لیے اپنا عمل اکٹھا کیا ہے۔ گزشتہ روز بلاول بھٹو نے ایک ٹویٹ میں وزیر اعظم کو ہمت دیتے ہوئے کہا: “اگر آپ میں ہمت ہے تو گورنر راج لگائیں، عمران خان! تاخیر نہ کریں، آج ہی لگا دیں۔”

RELATED ARTICLES

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -

Most Popular